پھنسی ہوئی لڑکی

محبت اور پھنسنےکے فرق کو تو سمجھتے ہیں نا آپ لوگ کہ نہیں؟

پچھلے دنوں ایک لڑکی میرے پاس آئی اور روتے ہوئے کہنے لگی کہ سر مجھے ایک لڑکے سے بہت محبت ہے۔پہلے وہ میرے ساتھ بہت اچھا تھا۔مجھ سے اظہار محبت کرتا تھا۔کہتا تھا کہ میں تمہارے بغیر نہیں رہ سکتا۔میرا خیال رکھتا تھا۔ہر وقت رابطے میں رہتا تھا۔ مگر اب وہ مجھے اگنور کرتا ہے۔میرے میسج کا جواب نہیں دیتا۔کال نہیں اٹھاتا۔جب اس کااپنادل ہو بات کر لیتا ہے ورنہ کہتا ہے کہ میں بزی ہوں۔حالانکہ وہ کہیں بھی بزی نہیں ہوتا۔مجھے اس کی ساری روٹین پتا ہے۔سر مجھے اس سے محبت ہے۔کچھ ایسا بتائیں کہ وہ ٹھیک ہو جائے۔مجھے مل جائے۔وہ بار بار بڑی معصومیت سےگفتگو کے دوران یہ جملہ بول رہی تھی کہ سر مجھے اس سے محبت ہے۔مجھے اس سے محبت ہے۔

میں نےتعلق کی تفصیل لینے کے لئے اس سے پوچھا کہ اس لڑکے سےآپ کا تعلق کیسے بنا تھا؟ کیونکہ بطور ماہر نفسیات میرے نزدیک تعلق کی بنیاد ہی تعلق کی مدت طےکرتی ہے۔اس سوال کے جواب میں اس لڑکی نے بتایا کہ تعلق اس لڑکے نے ہی شروع کیا تھا۔میں تو اس تعلق کے لئے بالکل بھی تیار نہیں تھی۔بلکہ میں تو اس تعلق کو بنانے کے لئے مان بھی نہیں رہی تھی۔

وہ لڑکا ہی ہر وقت مجھے میسج اور کال کرتا تھا۔میں نے اسے کتنی بار سمجھایا کہ مجھے اس قسم کے تعلق میں نہیں پڑنا مگر وہ میرے پیچھے پڑا رہا۔یہاں تک کہ میں مان گئی۔پھر آہستہ آہستہ وہ میٹھی میٹھی باتوں سےمیرے دل میں داخل ہو گیا۔اور مجھے اس سے محبت ہو گئی۔جیسے وہ مجھ پر مرتا تھا۔میں بھی اس پر مرنے لگی۔

میں نےاس سے مزید  پوچھا کہ کیا آپ کا اس  لڑکےسے کوئی جسمانی تعلق بھی تھا۔اس کے جواب میں اس لڑکی نے کہا کہ سر پہلے تو میں مانتی نہیں تھی۔پھر آہستہ آہستہ اس نے مجھے منا لیا اور ہمارے درمیان سب کچھ ہو گیا۔تب مجھے یہ نہیں پتا تھا کہ اس کام کو محبت نہیں کہتے۔

میں نے اس لڑکی کو سمجھایا کہ جسے آپ محبت کہتی ہیں ۔اسے لڑکوں کی لینگوئج میں جسمانی تعلق بنانے کے لئے لڑکی کوپھنسانا کہتے ہیں۔یہاں میں آپ کو یہ بھی بتاتا چلوں کہ ہمارے ہاں لڑکیاں چونکہ زیادہ لڑکیوں میں ہی رہتی ہیں۔اس لئے ان کو لڑکوں کی لینگوئج نہیں آتی۔لڑکیوں کے لئے لڑکوں کی لینگوئج سمجھنا بہت اہم ہے۔بےشمار لڑکے لڑکیوں کا جسم جیتنے کے لئے محبت   کے جال کا استعمال کرتے ہیں۔

ایک بار میں نے ریسرچ کے طور پر بےشمار لڑکوں سے پوچھا کہ آپ لوگ لڑکیوں کے ساتھ جسمانی تعلق بنانے کے لئےمحبت کا نام کیوں بدنام کرتے ہو۔سب کا ایک ہی جواب تھا کہ سر محبت کا نام استعمال کئے بغیر لڑکیاں اپنے جسم کو ہاتھ نہیں لگانے دیتیں۔کوئی لڑکی کتنی ہی اچھی اور شریف کیوں نہ ہو۔محبت کے لالچ میں پھنس جاتی ہے۔

میں نے اس لڑکی کو سمجھایا کہ اس لڑکے نے آپ کو بڑی ہوشیاری سے پھنسایا ہے۔آپ کو اس سے محبت نہیں ہے بلکہ آپ پھنس گئی ہیں۔بالکل ویسے ہی جیسے مچھلی کانٹے میں پھنس کر تڑپتی ہے۔آپ تڑپ رہی ہیں۔اور اوپر سے اپنی سادگی دیکھیں کہ اس تڑپنے کو آپ محبت کا نام دے رہی ہیں۔خود سے جھوٹ نہ بولیں۔مجھے اس سے محبت ہے کہنے کی بجائے یہ کہیں کہ مجھے اس نے پھنسا لیا ہے۔تا کہ آپ جتنی جلدی ہو سکے۔خود کو اس کانٹے سے باہر نکال سکیں۔اس نے جو آپ کو دھوکہ دینا تھا وہ دے دیا مگر اب آپ یہ کہہ کہہ کر کہ مجھے اس سے محبت ہے۔مجھے اس سے محبت ہے۔خود کودھوکہ دینا بند کریں۔

میں نےمزید کہا کہ آپ تو مچھلی سے بھی زیادہ سادی لڑکی  ہیں کیونکہ مچھلی کو بھی فری فوڈ کھانے کے فوراًبعدکانٹے میں پھنستے ہی سمجھ آ جاتی ہے کہ میں پھنس گئی ہوں۔اور پھروہ اپنی بقا اور خوشیوں کی خاطرکانٹے سے نکلنے کے لئےتڑپتی اور زندگی کی طرف واپس لوٹنے کے لئےزور لگاتی ہے۔وہ اپنے پھنسنے کو محبت کا نام نہیں دیتی کہ مجھے محبت ہو گئی ہے۔ میں مچھیرے کی ہوں اورمچھیرا میرا ہے۔مجھے مچھیرا ملے گا تو میں زندہ رہوں گی ورنہ میرا جینا مشکل ہے۔میں مچھرے کے بغیر مر جاؤں گی۔وہ میں مچھیرے کاانتظار کروں یا آگے بڑھوں کےلئے استخارہ نہیں کرواتی۔کسی سے حساب نہیں لگواتی۔اس جھوٹی امید سے جڑی نہیں رہتی کہ شاید ایک دن مچھیرے کو احساس ہوجائے اور وہ پلٹ کرہمیشہ کے لئے میرا ہو جائے۔

 یاد رکھیں مچھلیاں پکڑنا  مچھیرے کا مشغلہ ہوتا ہے ۔ وہ کسی ایک مچھلی کا نہیں ہوتا۔اس لئے وہ آپ کا نہیں ہو سکتا۔مچھیرے کی جعلی اور جھوٹی محبت ڈھونڈنے کی بجائے اس کی محبت سے باہر نکلنے پر زور دیں۔مجھے اس سےمحبت ہے۔مجھےاس سے محبت ہے۔کا ورد کرنے کی بجائے۔میں پھنس گئی ہوں۔میں پھنس گئی ہوں۔کا ورد کریں۔تاکہ آپ کا لاشعور آپ کو اس کی جھوٹی محبت کے لالچ سے نکلنے میں آپ کی مدد کرے۔یہی اس سارے مسئلہ کا حل ہے۔

آپ کا ماہر نفسیات۔۔۔صابر چوہدری۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *